لائق شاہ درپہ خیل بحثیت ادیب اور شاعر

1031

لائق شاہ درپہ خیل 16جون1935کو شمالی وزیرستان ایجنسی کی تحصیل میرانشاہ میں پیدا ہوئے۔ آپ کا تعلق بالائی داوڑ کے درپہ خیل شاخ سے تھا۔ آپ کے والد کا نام زربت خان تھا۔آپ نے ابتدائی تعلیم اپنے گاؤں میں حاصل کی۔ 1952میں گورنمنٹ ہائی سکول میرانشاہ بازار سے میٹرک کیا۔اس کے بعد گورنمنٹ کالج ڈی۔ آئی۔ خان سے بی۔اے کی ڈگری حاصل کی۔ بی ۔اے کرنے کے بعد آپ ویلج ایڈ ڈیپارٹمنٹ میں پبلک ریلیشنز آفیسر تعینات ہوئے۔ لیکن جلد سرکاری نوکری چھوڑدی اور اپنے علاقے میں سرکاری سکیموں کے ٹھیکے لینا شروع کردیئے۔ اسی کے ساتھ ساتھ اپنے قبیلے کے ملک کے فرائض بھی سر انجام دیتے رہے۔
لائق شاہ درپہ خیل پشتو زبان کے ایک مشہور شاعر، نثرنگار، افسانہ نگار، مؤرخ اور ادیب تھے۔ لائق شاہ درپہ خیل نے تاریخ کی بہت سی کتابیں لکھی ہیں۔ علاوہ ازیں انہوں نے شاعری کے مجموعے اور ادبی افسانے بھی تحریرکئے ہیں۔ اُن کی کتابوں کی تعداد بہت زیادہ ہے تاہم پشتو ادب کی چند مشہور کتابوں کے نام یہ ہیں۔ 

  • وزیرستان
  •  ملا پاوندہ
  • زندان
  • ٹوچی چَپے چَپے
  • غریو

 “وزیرستان”نامی کتاب پشتو زبان میں لکھی گئی ہے۔ یہ کتاب وزیرستان کے تاریخ کی پہلی مستند کتاب ہے۔ یہ کتاب وزیرستان کے قبائلی علاقے میں اسلام کی آمد سے لے کر وزیرستان کے موجودہ حالات کا تفصیلی جائزہ پیش کرتی ہے۔ “ملا پاوندہ” نامی کتاب جنوبی وزیرستان کے محسود قبیلے سے تعلق رکھنے والے جنگجو ملا پاوندہ کی انگریزوں کے خلاف لڑائیوں کی تاریخ پر مبنی ہے۔اس کتاب میں ملاپاوندہ کی تحریک حریت اور شمالی وزیرستان کے   داوڑ قبائل کی عیدک شاخ کے ہاں مہمان پناہ و مہمان نوازی تک پوری تاریخ شامل ہے۔Saeed Ahmad Dawar 
“زندان” لائق شاہ درپہ خیل کا ایک ناول ہے جو کہ افعانستان اور پاکستان کے سیاسی حالات کے متعلق ہے۔
“ٹوچی چَپے چَپے” لائق شاہ درپہ خیل کے افسانوں پر مشتمل کتاب ہے جو کہ وزیرستان کے معاشرے اور رسوم و رواج کی عکا سی کرتی ہے۔”
“غریو” بھی لائق شاہ درپہ خیل کا شعری مجموعہ ہے ۔ لائق شاہ درپہ خیل کی ابتدائی شاعری رومانوی ہے۔ جب کوئی لائق شاہ درپہ خیل کے مجموعہ اشعار کا مطالعہ کرتا ہے تو ایسا محسوس ہوتا ہے کہ آپ جان کیٹس(John Keats) کے اشعار پڑھ رہے ہیں۔ لائق شاہ عزل بھی لکھتے تھے، لائق شاہ کی شاعری پڑھنے سے ہمیں رحمان بابا، خوشحال خان خٹک ،حمید بابا، اور علی خان بابا کی شاعری کی یاد تازہ ہو جاتی ہے۔ لائق شاہ اپنی شاعری میں تصوف کے ساتھ ساتھ سیاست، اخلاقیات اور قومیت پر بحث کرتے ہیں۔ اُس کی شاعری انسان کے روزمرہ زندگی کے واقعات کی عکاسی کرتی ہے۔
لائق شاہ کی شاعری مشکل نہیں ہے اور ہر پڑھنے والا اُنکے شعروں کو بغیرکسی دشواری  کے مفہوم کو سمجھ لیتا ہے۔
مختصر یہ کہ لائق شاہ درپہ خیل پشتو آدب کے ایک بڑے شاعر گزرے ہیں۔ ان کی تاریخ کی کتابیں حوالے کے طور پر استعمال کی جاتی ہیں۔

نوٹ: لائق شاہ درپہ خیل کی کتاب وزیرستان کا اردو ترجمہ جلد شائع ہونے والا ہے۔ ترتیب مشہور صحافی اور تجزیانگار سمیع اللہ داوڑ نے کی ہے۔

تحریر: سعید احمد داوڑ

[hr align=”center” size=”double” weight=”thick”]

(No Comments) کوئی تبصرہ نہیں

Leave A Reply (جواب چھوڑ دیں)